شریف برادران کی لندن میں ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آ گئی

پٹرولیم قیمتوں میں اضافے، ڈالر کی اُونچی اُڑان، اور، بڑھتی مہنگائی سے نواز شریف پریشان ۔ وزیراعظم شہباز شریف پر برہمی کا اظہار ۔ مریم کے مؤقف کی حمایت کر دی ۔ مفتاح اسماعیل کی پالیسیوں پر بھی شدید تنقید ہوئی ۔۔ شریف برادران کی لندن ملاقات کے راز افشاں ہو گئے ۔

لندن میں لیگی قائد نواز شریف، اور، وزیراعظم شہباز شریف کی ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آ گئی ۔ نواز شریف نے پٹرولیم قیمتیں کم نہ کرنے پر برہمی کا اظہار کیا ۔ روپے کی تیزی سے بے قدری پر بھی بڑے بھائی ناراض نظر آئے ۔ اسحاق ڈار نے مفتاح اسماعیل کی پالیسیوں پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا ۔ آئی ایم ایف سے قسط ملنے کے بعد ڈالر دو سو روپے تک آنا چاہیے تھا ۔ تیل کی قیمت بھی ایک سو نوے سے دو سو روپے تک ہونی چاہیے تھی ۔ نواز شریف نے چھوٹے بھائی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ۔ شہباز صاحب! یہ آپ ڈار صاحب کی بات سن رہے ہیں ۔

ن لیگ کے قائد بولے ۔ پٹرول، اور، بجلی کی قیمتوں میں کمی کے مریم بیٹی کے موقف کا حامی ہوں ۔ مہنگائی، تیل اور بجلی کی قیمتوں سے بہت دکھی ہوں ۔ یہ سب ہماری جماعت پر بہت بُرا اثر ڈال رہا ہے ۔۔ شہباز شریف نے جواب دیا کہ مفتاح کے مطابق ایسا کرنے سے آئی ایم ایف ناراض ہو گا ۔۔ ٹیکس وصولیوں اور پٹرولیم کمپنیوں کے معاملات بھی دیکھنا ہوتے ہیں ۔ جس پر سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار پھر بولے ۔ آئی ایم ایف نے کبھی نہیں کہا کہ عوام کو ریلیف نہ دو، مہنگائی کم نہ کرو ۔

حکومتی معاشی پالیسیوں پر سخت تنقید کے دوران وزیراعظم شہباز شریف زیادہ تر خاموش ہی رہے ۔ آرمی چیف کی تقرری کے معاملے پر نواز شریف نے صرف اتنا ہی کہا کہ فوجی قیادت کی مشاورت سے فیصلہ کرنا ۔ اس موقع پر سابق وزیراعظم نے اپنے ادوار میں آرمی چیف کے تقرر کے تجربات بھی بتائے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں