پنجاب میں گندم اور آٹے کا نیا بحران جنم لینے لگا

پنجاب میں گندم اور آٹے کا نیا بحران جنم لینے لگا ۔ اوپن مارکیٹ میں گندم پینتیس سو روپے فی من میں فروخت ہونے لگی ۔ صوبے میں گندم اور آٹے کی قیمتوں میں مزید اضافے کا خدشہ ہے ۔

سندھ حکومت نے گندم کی امدادی قیمت چار ہزار روپے فی من مقرر کرنے کا اعلان کیا تو ملک بھر میں ہنگامہ برپا ہو گیا ۔ پنجاب کی اوپن مارکیٹ سے گندم سندھ سمگل ہونے کے امکانات پیدا ہو گئے ۔ مہنگی گندم ہونے کے باوجود پنجاب میں قلت کا خدشہ ظاہر کیا جانے لگا ۔

فلور ملز ایسوسی ایشن کے سابق چیئرمین عاصم رضا کہتے ہیں ۔ آٹے کے سنگین بحران سے بچنے کیلئے فلور ملز کو بلارکاوٹ گندم کی فراہمی یقینی بنائی جائے ۔ تمام صوبوں کو مشترکہ طور پر گندم کی قیمت اور قلت کا مسئلہ حل کرنا چاہیے ۔

ادھر پنجاب حکومت نے گندم کی سمگلنگ روکنے کیلئے کارروائیاں شروع کر دیں ۔ صادق آباد میں پنجاب سندھ سرحدی علاقے کوٹ سبزل کے مقام پر گاڑیوں کی چیکنگ سخت کر دی گئی ۔ ضلعی انتظامیہ نے آٹے کے پینتالیس سو تھیلے سندھ سمگل کرنے کی کوشش ناکام بناتے ہوئے سٹاک ضبط کر لیا ۔

گندم کی سمگلنگ روکنے کیلئے پنجاب حکومت کی کوششیں ایک طرف ۔ بروقت گندم درآمد کرنے سے ہی بحران سے قابو پایا جا سکتا ہے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں