یورپی ممالک میں بھی گرمی کی لہر نے شدت اختیار کرلی

یورپی ممالک میں بھی گرمی کی لہر نے شدت اختیار کرلی ہے.فصلوں، ایئر پورٹس اور ٹرین کی پٹریوں کو شدید نقصان کا سامنا ہے،نظامِ زندگی مفلوج ہو کر رہ گیا ہے،فرانس، یونان، سپین اور اٹلی میں جنگلوں میں لگی آگ نے ہزاروں لوگوں کو علاقہ بدری پر مجبور کر دیا ہے.

غیر ملکی میڈیا کے مطابق شدید گرمی کے باعث لندن کے مشرقی علاقوں میں آتشزدگی کے واقعات پیش آئے،برطانوی دارالحکومت کے کئی میدانی علاقوں میں گھاس میں بھی آگ لگ گئی، جس سے اہم شاہراہوں پردھواں پھیل گیا، آگ کے بھڑکنے سے تاریخی چرچ بھی متاثر ہوا ہے،نارفوک گاوں میں آگ نے 19 گھر اور 25 گاڑیوں کو تباہ کر دیا ہے،برطانیہ کے مشرقی اور مغربی علاقوں کے لیے ریل کا نظام بھی متاثر ہوا ہے،بجلی کی کمپنیوں کے مطابق انہیں اہم شہروں میں مسائل کا سامنا ہے، برطانوی حکومت کی جانب سے تعلیمی ادارے بند کر دیے گئے ہیں، جبکہ لاکھوں افراد گھروں میں محصور ہو کر رہ گئے ہیں،برطانیہ میں گرمی میں مزید اضافے کی پیش گوئی اور درجۂ حرارت 43 سینٹی گریڈ تک جانے کا انتباہ جاری کیا گیا ہے،،،فرانس، سپین، یونان اور اٹلی میں جنگلوں میں آگ لگی ہوئی ہے اورسیکڑوں فائر فائٹرز آگ بجھانے کی کوشش کر رہے ہیں،،،حکام نے ہزاروں افراد کو محفوظ مقامات پر منتقل کر دیا ہے، یورپ کے بعض ممالک میں درجۂ حرارت 47 ڈگری سینٹی گریڈ تک پہنچنے کا بھی خدشہ ظاہر کیا گیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں